یومِ اقبال کی تقریب

تعمیرِ پاکستان کیلئے فکرِ اقبال سے رہنمائی وقت کی اہم ضرورت ہے۔یومِ اقبال کی تقریب سے فتح محمد ملک،ڈاکٹر نعیم غنی، ڈاکٹر ایوب صابر اور میاں محمد جاوید کا خطاب

اسلام آباد۔اگر آج اقبال زندہ ہوتے تو وہ دیکھتے کہ پاکستان کے جغرفیائی خدوخال اور نظریہ مملکت دونوں کو انہی کے افکار کے روشنی میں تشکیل دیا ہے۔اقبال کی یادمیں ایک تقریب میں بانی پاکستان قائداعظم محمد علی جناح نے یہ بات خودکہی تھی ۔ہمیں یاد رکھنا چاہیے کہ پاکستان کی تشکیل علامہ اقبال کے فکر اور قائداعظم کے تدبر کا ثمر ہے لیکن قیامِ پاکستان کی مخالفت سیاسی اشرافیہ نظریہ پاکستان کو کمزور اور مبہم بنانے کیلئے دونوں شخصیات کو الگ الگ خانوں میں بانٹنے کی قابلِ مذمت کاوشیں کر رہی ہے جبکہ 1940؁ء کی قراردادِ پاکستان دراصل فکرِ اقبال ہی کا پَرتو ہے۔ ان خیالات کا اظہار معروف دانشور فتح محمد ملک نے نظریہ پاکستان کونسل کے تحت "تعمیرِ پاکستان فکرِ اقبال کی روشنی میں" کے موضوع پرگفتگو کرتے ہوئے اپنے صدارتی خطاب میں کیا۔ انہوں نے کہا کہ آج پاکستان کو کٹا پھٹا ملک دیکھنے کی خواہش مند وطن دشمن قوتوں کو جان لینا چاہیے کہ انتہائی نامساعد حالت میں بھی پاکستان کو ایٹمی قوت بنا دینے والی قوم اقبال کے پیغامِ تعمیرِ پاکستان کو سمجھ بھی چکی ہے اور اس پر عمل پیرا بھی ہے۔ معروف اقبال شناس دانشور پروفیسر ڈاکٹر ایوب صابر نے کہا کہ فکرِ قبال کو سمجھنے کیلئے اُن کے تصورِ خودی کی تفہیم وقت کی اہم ضرورت ہے۔ اقبال نے خودی کو تقویت دینے اور کمزور کرنے والے دونوںعناصر کی نشاندہی کر کے ہمیں یہ موقع دیا ہے کہ ہم اپنے کردار و عمل کی جانچ پڑتال کر کے وطنِ عزیز کی سر بلندی کیلئے سر گرم عمل رہیں اور کسی بھی حالت میں انفرادی یا قومی سطح پر دستِ سوال دراز کرنے سے اجتناب کرتے ہوئے ثابت کریں کہ ہم فکرِ اقبال کے شناسا بھی ہیں اور عامل بھی۔ نظریہ پاکستان کونسل کے چیئرمین ڈاکٹر نعیم غنی نے اپنے خطاب میں کہا کہ ہم اس وقت تعمیرِ پاکستان کے مرحلے میں ہیں جوہم سے بہت سنجیدگی اور ذمہ داری سے اپنے فرائض کی ادائیگی کا بھر پور تقاضا کر رہا ہے اور نئی نسل کیلئے ضروری ہے کہ وہ خود کو اس چیلنج سے نمٹنے کیلئے ہر دم تیار رکھے اور پیغامِ اقبال کی روح کو سمجھے جو سعی و عمل کا تقاضا کر رہی ہے۔ کونسل کے سینئروائس چیئرمین میاں محمد جاوید نے کہا کہ اقبال ایک خوش فکر شاعر ہونے کے ساتھ ساتھ بحیثیت قانون دان اور سیاستدان ایک بے حد باعمل انسان تھے ۔ آج ہمیں اپنے نظامِ تعلیم اور تربیت دونوں میں اقبال کی شخصیات کو بطورِ رول ماڈل سامنے لانا ہوگا تاکہ تعمیرِ پاکستان کا مرحلہ کامیابی سے ہم کنار ہو سکے۔  

     انجم خلیق

ڈائریکٹر(میڈیا)

0322-5370347